Guinness World Records: Pakistan first or Politics?


Originally published at Express Tribune

Pakistan made it to international media again on 20th, 21st and 22nd Oct 2012, but happily so, in a positive and progressive manner. In a country that is so accustomed to digest target killings, honor killings, bomb blasts, terrorist attacks and drone strikes, the news of Pakistan setting records after records are nothing but moments of pure joy and national pride.

Pakistani_f;ag

Midst of all the surrounding taboos of terrorism, political instability, corruption, restlessness, load-shedding, inflation, extortion, kidnappings, target killings, sectarian violence and what not, these small events serve as ventilators that bring in fresh air of hope, joy, life and belief in ourselves. This Punjab Youth Festival (PYF12) which was named as “Pakistan Youth Festival” by CM Punjab Mr. Shahbaz Sharif is, regardless of any political affiliation, one of its kind and a great initiative for all the youth of Punjab, a great opportunity to spread positivity and hope, i wish all Pakistanis have these kind of events in their respective provinces and cities.
Although I wasn’t physically present there in National Hockey Stadium Lahore, but I witnessed this on my television screen and recited the national anthem with all those participating. It felt great, sheer pleasure, a moment of pure national pride and unity. There have been only few times this year, when Pakistan emerged beyond national level in a positive and progressive manner, and this record setting activity was by far on top of the list. Other good news was the exhibition match between Pakistan XI and International World Stars XI, indeed a door has opened, making its way for international cricket back in Pakistan. The largest national flag record as well held my heart like millions of Pakistanis around the globe. mosaic reord pak

All these news brought smiles on millions of distressed, agitated, disappointed and worried faces. People rejoiced and cherished these moments. For they know how these little things help in national image building in the outer world. Pakistan has never emerged in world world news this way. Sadly though, but others mostly know us as a nation that manufactures Taliban and terrorists and export them. People text each other and congratulated on these records and social media went all green again. Twitter trends and public response was so overwhelming.

This happy episode continued until I found some people ranting about it and came across tweets like these.

Regardless of political hatred for Punjab government or PMLN, we all should have cherished these precious moments in a time when all we get is bad news. Mostly PTI trolls took the pride in overlooking the achievement and degrading Punjab Government for corruption and looting money and all. As mentioned in the copied tweets, that Punjab government spent billions of rupees on PYF12 and all. This proves that political hatred is greater than patriotism or love for Pakistan. This is biased, political leaders and opinion makers need to divert their attention to this as well or else it would become an even more critical issue, it also makes obvious whose out there for Pakistan and whose there for personal/political gains. This brings two simple questions in my mind that I would like to ask all the self-claimed-revolutionists.

1- If this money could be so well used otherwise, why didn’t they donated all the money for rehabilitation of drone victims instead of creating all the hype and drama for so-called ‘peace march’, when they never even marched to the announced station in Wazirstan?

2- Are these records building Pakistan’s image or Punjab government’s image? Who participated, common man or political workers? In case PTI comes into power, should we expect no-sports in Pakistan, since its wastage of time and money?

In my humble opinion, we’ve already suffered a lot and the basic reason for that is our lack of unity. We are so separated and segregated by these ‘classes’. Be it ethnic, political, sectarian or caste. We cannot rise unless we break these immortal shells that are keeping us separated and injecting intolerance & hatred among us. Having different opinions is okay but not on cost of Pakistan. Its about time that we put in combined efforts for Pakistan beyond political bias, learn to give credit where its due, Let’s be united and cherish these moments of national pride and joy together, and show the real soft image of Pakistan to the world.

Advertisements

A Day in Malala’s Diary


TUESDAY OCTOBER 9,

8:00 AM 

“Dear Diary, Its a bright Mangora morning here in Swat Valley; I just had my breakfast and now heading towards school. Last night I saw a strange dream. There was this lamp in middle of a dark jungle. Some people were trying to put it off because it seemed different and brighter, but every time they did, little fractions of flame lit up again, in different colors, lights and styles. I smiled on their nuisance, they couldn’t understand, ‘lights cannot be put off so easily‘.

1:30 PM

School was fun today, I always enjoy studying, I know the importance of education. I pray to Allah Almighty that all the girls in Pakistan get education facility. Strange thing happened today. While I was going back home, an uncle stopped our van, asked for me, when I was identified, he stood there watched me, took out his gun and shot at me. One Bullet passed through my skin and rested somewhere in my skull and other bullet passed out through my neck. I fainted and fell down…. Once I recover from these injuries, I will tell you more about this incident. And be sure, this act of cowardice won’t stop me (I couldn’t write this, I fell unconscious) ‘ 

Dear Readers, I am Malala’s diary. You all know Malala Yousafzai right? That 14 year old girl who stood tall when this great Valley of SWAT was in havoc; she fought with all she had, for her and other girl’s education rights, when female education was banned and schools were being burnt in this valley. The only weapon she had was her diary that became her voice, her identity. She was recognized, acknowledged and awarded both nationally  and internationally for her courage and initiative.

She wasn’t just an ordinary girl; she was a thought, an emblem of resistance or rather conscious and sanity in Pakistan. She had vision, she had potential and self belief that she displayed and expressed quite well, amid all that brutality and inhuman activities going around, she never shattered or stepped back, she held her head high and kept working for the cause until earlier today when she was shot in her head. Can you imagine, a 14 year old, innocent child being shot in her head. I know everyone in Pakistan, infect in whole world is worried and sad about the incident and are praying for her recovery.

Since Malala isn’t around, I want to ask you few simple questions if you’d be nice enough to answer please.

Malala Wounded
Malala Yousafzai in hospital

What was Malala’s crime or sin?                                       

Is this how you treat people with vision in Pakistan?

Who would take her mission forward?

Doesn’t this incidence pose a potential threat for every other girl in Pakistan who stands tall for a cause?

Please pray for Malala. She’s a sweet little child; she’s our daughter, Pakistan’s daughter. And remember, it’s not about Malala alone; it’s about every daughter of Pakistan.

غزل |  حیراں ہیں کلیاں ، گلستاں گم سم


حیراں    ہیں    کلیاں  ،  گلستاں    گم   سم
تحیر   میں  آزردہ  مکیں ،   مکاں  گم  سم
سراب  کی   آس  پہ   تشنہ  لب ہیں صحرا
موج ِ  سمندر  پہ  ساحل  کی  اذاں  گم  سم
لئے  ہاتھوں میں ہاتھ ،  کیسے  بدل جاتے
خاموش   ہیں   لب   ،  اور   بیاں  گم   سم
سحر  زدہ  ہیں  چپ چاپ سے کوہ و دمن
سر  پہ  ازل سے کھڑا  ہے سائباں گم سم
حیرتوں کی  تیرگی میں غرق ہیں ستارے
تشنگی  میں  گھومتی  ہے کہکشاں گم سم
حرمتِ  لفظ کے ، قریشی،  دشت میں مقیّد
تخیل کی زمیں گم  ، سوچ کا آسماں گم سم

Hairan hain kaliyan , gulistan gum sum
tahyyur mein azurda makeen, makan gum sum
sarab ki aas pe tashna lab hain sehra
mauj-e-samander pe sahil ki azan gum sum
liye hathon mein hath, kese badal jaty hain
khamosh hain lab, aur bayan gum sum
sehr zada hain chup chap se koh-o-daman
sar pe azal se kharra hai sayiban gum sum
hairaton ki teergi mein gharq hain sitaray
tishnagi mein ghoomti hai kehkashan gum sum
hurmat-e-lafz ke, qureshi, dasht mein muqayyad
takhayyul ki zameen gum, soch ka aasman gum sum

غزل |  خواہشیں ہوئیں کیسے سب دھواں دھواں مت پوچھ


خواہشیں   ہوئیں   کیسے   سب   دھواں   دھواں   مت    پوچھ
اُٹھے   ہیں   رہ   رہ   کے   بہت   دل   میں  ارماں  مت پوچھ
یوں تو  دیکھی  ہیں  بہت  خم  و  ساغر  سی  بے تاب  آنکھیں
ہاں   مگر   ان   نیم   باز   نگاہوں   کی   کہکشاں  مت  پوچھ
ڈالی     ڈالی     کُوچ     اپنا  ،   اے    باغباں   تُو   دیکھ   ذرا
اُجڑا   ہے   کیوں   کر  سرِ   بہار    اپنا   آشیاں    مت  پوچھ
یوں  تو  مثل  ہے  حوصلہ اپنا ، مسکرا کے سب سنا دیں گے
تھم سکیں گے نہ  اشک تیرے ، شب غم کی داستاں مت پوچھ
سانس  لیتے  ہیں  ،  ہونٹوں  پر  اب  تلک  ہے  مسکان  باقی
دھڑکنیں اپنی  مگر  ، چلتی ہیں کیسے ،  یہ مہرباں مت پوچھ
دور تھا جام کا ، سرِ محفل قریشی، یادوں کی تھی بارات مگر
جھوم  اُٹھی  اپنے  شعروں  پہ  کیسے  بزمِ عاشقاں مت پوچھ

Khuwahishen huin kese sab dhuwan dhuwan mat pooch
uthhay hain reh reh ke bohat dil mein armaan mat pooch
yun to dekhi hain bohat khum-o-saghar si beytab aankhen
haan magar unn neem baz nigahon ki kehkashan mat pooch
daali daali kooch apna, ae baghbaan tu dekh zara
ujjra hai kyun ker sar-e-bahar apna aashiyan mat pooch
yun to misl hai hosla apna, muskra ke sab suna den ge
thum na saken ge ashq tere, shab-e-ghum ki dastaan mat pooch
saans letay hain, honton per ab talak muskaan hai baqi
dharkane’ apni magar, chalti hain kese, ye mehrbaan mat pooch
daur tha jaam ka, sar-e-mehfil qureshi, yaadon ki thi barat magar
jhoom uthhi apne she’ron pe kese bazm-e-aashiqan mat pooch

غزل |  دل کا جو دل سے ہے سلسلہ عجیب سا


دل  کا  جو  دل  سے  ہے سلسلہ عجیب  سا
بخشا  اس  نے  ہم  کو  حوصلہ  عجیب  سا
نہ  تم  نے  کچھ کہا ، نہ اک حرف  ہم بولے
مختصر  مگر  جامع ،  وہ مکالمہ عجیب سا
نہ   ساتھ   چلنا  ہے ،  نہ  راستہ   بدلنا  ہے
میرے  راہبر  کا  اب  یہ  فیصلہ  عجیب سا
جلوہ گرہے سامنے مگر  دسترس سے دور
مٹ  سکا  نہ آج  تک  یہ  فاصلہ عجیب سا
dil ka jo dil se hai silsila ajeeb sa
bakhsha iss ne hum ko hosla ajeeb sa
na tum ne kuch kaha, na ik harf hum bolay
mukhtasir magar jama’y wo mukalma ajeeb sa
na sath chalna hai na rasta badalna hai
mere rahbar ka ab ye faisla ajeeb sa
jalwa gar hai samne magar dastaras se duur
mitt saka na aaj tak ye faasla ajeeb sa

شیروانی


“فہیم اُٹھ جاؤ”

“امی آج تو سونے دیں، اتوار ہے آج”

 دیکھو کیا ٹائم ہورہا ہے، تمھارے ابا بازار گئے ہیں، آ کر تمھیں سوتا دیکھیں گے تو پھر بگڑیں گے”۔

اور فہیم اس کو آخری الٹیمیٹم جان کے آنکھیں ملتا، منہ بسورتا باہر آیا۔

“آج پھر چائے پاپے، نجانے کن پاپوں کی سزا مستقل پاپوں کی شکل میں مل رہی ہے”

اسنے قدرے ناگواری سے کہا۔

“اونہوں، ایسے نہیں کہتے، جو مل رہا ہے صبر شکر کرکے کھا لو، ایسے کتنے لوگ ہیں جنہیں یہ بھی نصیب نہیں” امی نے سمجھاتے ہوئے کہا۔

“مگر ایسے بھی تو کتنے لوگ ہیں جن کے دسترخوان پہ انواع و اقسام کے۔۔۔” اسنے شکوہ کیا

“فہیم، اپنی چادر دیکھ کے پاؤں پھیلانے چاہیئں” امی نے بات کاٹ کر ٹہوکا دیا، اور پھر توقف کے بعد بولیں۔

“یہ اوپر والے کی دین ہے، کسی کو زیادہ کسی کو کم، اس میں ہم انسانوں کی مرضی یا صوابدید کو دخل نہیں، اور تمھارا باپ کوئی شہر کا کمشنر نہیں کہ مانانہ آمدن کثیر ہو، نا ہی ہم کوئی خاندانی ریئس ہیں کہ پشتنی دولت پہ عیاشیاں کرتے پھریں”

“مگر امی، ایسے بھی گئے گزرے حالات نہیں اب ہمارے” اس نے آنکھیں مٹکاتے ہوئے کہا۔ پھر چائے میں ڈبویا ہوا پاپا کھاتے ہوئے بولا: “اب دیکھیں نا، ہم نے جہاں خرچ کرنا ہو بلا وجہ فضول خرچی کرتے رہتے ہیں، اسکی بجائے ہم اپنی روزمرہ زندگی بہتر بنا سکتے ہیں”

“کون سی فضول خرچی بیٹا؟ ہم تو اتنی کفایت شعاری سے گزر اوقات کرتے ہیں، جبھی تو دیکھو  ابھی چند ماہ پہلے تمھاری آپا کی کیسی شان و شوکت سے شادی کی۔”

“امی، یہی تو میں کہہ رہا ہوں، آپا کی شادی میں ہم نے کتنی فضول خرچی کی، اتنا زیور، جہیز اور ایسی پر شکوہ دعوتیں، مہمانوں کو اپنی حیثیت سے بڑھ کے قیمتی تحائف، اور آپا کی ساس کو سونے کا سیٹ، جبکہ خود انکے اپنے پاس ایسا قیمتی سیٹ نہیں تھا، آپ نے اپنی اور انکی حیثیت سے زیادہ قیمتی تخفہ دیدیا۔ کتنا قرض چڑھ گیا، آپا تو گئیں، اب ہماری نسلیں قرض کے بوجھ تلے دبی رہیں گی”

“تم ابھی بچے ہو، تم یہ باتیں نہیں سمجھتے بیٹا” انہوں نے جان چھڑواتے ہوئے کہا۔ اسی اثناء میں فہیم کے اباجو بازار تک گئے تھے وہ بھی لوٹ آئے اور گفتگو میں شریک ہوتے ہوئے بولے۔

“کیوں بھئی میاں صاحبزادے، آپکو اپنی آپا کی شادی کے ٹھاٹھ باٹھ سے کیا مسئلہ ہے، جو اسکے نصیب کا تھا سو وہ لے گئی، اب جو ہے وہ تمھارا اور علی کا ہی ہے”

“یہ بات نہیں ہے ابا” وہ ملتجہ لہجے میں بولا

“تو پھر کیا بات ہے” ابا نے پوچھا

“بات یہ ہے کہ ہم نے اپنی حیثیت سے زیادہ خرچہ کیا، بلا وجہ قرض لیا لوگوں سے، اور اصراف کیا، صرف اس لئے کہ لوگوں کے سامنے ہماری ناک اونچی رہے، مگر اس کا فائدہ تو نہیں ہے نہ کوئی بھی” فہیم نے اپنا مؤقف واضح کرتے ہوئے کہا

“دیکھو بیٹا،ہم مڈل کلاس لوگ ہیں، مڈل کلاس والوں کے پاس نہ تو عیاشی کے لئے دولت وآسائشیں فراہم ہوتی ہیں اور نہ ماتم کرنے کو غربت۔ مڈل کلاس والوں کے پاس سفید پوشی ہوتی ہے، قائم رکھنے کو بھرم ہوتا ہے، اور یہی بھرم قائم رکھنا اسکی زندکی کا اولین مقصد، گول اور اچیومنٹ ہوتا ہے” ابا نے سمجھانے کے انداز میں کہا

“مگر ابا یہ کوئی ایکسکیوژ تو نہیں ہوا نا، ہم نے خود پر جان بوجھ کر یہ لیبل چپکایا ہوا ہے، ہمیں کسی نے مجبور تو نہیں کیا ہوا نا” اس نے دلیل دینے کے انداز میں کہا

“بیٹا ہمارے معاشرے میں سفید پوش آدمی کا لباس اسکا بھرم ہوتا ہے ورنہ وہ ننگ وجود تصور کیا جاتا ہے، سفید پوش انسان اپنا بھرم قائم رکھنے کی جدوجہد میں ہی عمر گزارتا ہے، یوں کہو کہ اسکی زندگی کا مقصد اور گول ہی اپنا امیج قائم رکھنا ہوتا ہے”

انہوں نے مزید وضاحت کے انداز میں کہا

“مگر ابا۔۔” فہیم نے نفی میں سر ہلاتے ہوئے کہا

“تمھاری سوچ اچھی ہے، مگر یہ کتابی باتیں ہیں، پریکٹکل لائف میں نہیں چلتیں یہ باتیں۔۔” ابا نے فیصلہ کن انداز میں کہا

“آج بازار سے تھوڑا پھل لیتے آئے گا، آمنہ کہہ رہی تھی شاید وہ چکر لگائے” امی نے ٹوکتے ہوئے فرمائش کی اور فہیم تلملا کر رہ گیا اور بولا: “اب آپا کے سامنے کیا بھرم رکھنا ہے، کیا وہ نہیں جانتی ہم پھل افورڈ نہیں کرتے۔۔۔”

————–٭٭٭٭————٭٭٭٭————

بات یونہی گزر گئی اور ہوتے ہوتے رمضان آگیا۔ عید کے تیسرے دن رضوان، جو کہ فہیم کا بہترین دوست تھا اسکی شادی قرار پائی۔ رضوان کا خاندان امیر اور انکا رہن سہن رئیسانہ تھا۔ رضوان کی بارات پر تمام دوستوں اور اسکے رشتہ داروں نے شیروانی پہننے کا پروگرام بنایا۔ بہت بحث مباحثے کے بعد شہر کے ایک معروف ڈیزائنر سے شیروانیاں سلوانے پر اتفاق ہوا اور فی کس قیمت 50000 طے ہوئی۔ یہ قیمت رضوان اسکے دیگر دوستوں اور رشتہ داروں کے لئے تو مناسب تھی مگر فہیم کی قوتِ خرید سے باہر۔ اس نے پہلے بہانے سے ٹال مٹول کرنے کی کوشش کی، شرکت نہ کرنے کا ارادہ کیا، مگر تعلق ایسا تھا کہ یہ ممکن نہ تھا، ایک روز اسی طرح دوستوں کی محفل میں کسی دوست نے کہا، “یار فہیم، تم نے ابھی تک پیسے نہیں دیئے، اپنی بہن کی شادی پر اتنا خرچہ اور دوست کی شادی پر کنجوسی” دوسرا بولا “یار فہیم اگر تیرے پاس پیسے نہیں تو تُو بے شک کہیں اور سے سلوا لے شیروانی” تیسرا بولا “یا ہم سب دوست تھوڑے تھوڑے پیسے ملا کر دیتے ہیں” اور دوستوں نے بھی تائید کی۔ تب فہیم کو پہلی بار ابا کی بھرم اور سفید پوشی والی بات یاد آئی، اور اسکے اندر کا مڈل کلاس، انا والا انسان انگڑائیاں لیتا باہر آیا، اور کسی بھی امداد لینے کے امکان کو رد کرتے ہوئے کہا، نہیں ایسی بات نہیں، بس مجھے یاد نہیں رہا، اسی ہفتے دے دونگا۔ اسنے ابا سے ذکر کیا تو انہوں نے 15000  تک کا وعدہ کیا اور ایک دفتری دوست سے ادھار لیا، باقی فہیم نے اپنی پرانی موٹر سائیکل  30000 میں فروخت کی، اور 5000روپے ایک اور دوست سے قرض لیا۔ عید سے ایک دن پہلے شیروانی سل کے آئی۔

————–٭٭٭٭————٭٭٭٭————

“امی میں عید پر بھائی کا پرانا سوٹ نہیں پہنوں گا” علی کی آواز صحن سے آئی

“بیٹا تمھیں پتا ہے نہ بھائی کی شیراونی بنوا لی ہے، تمھارے ابا اور میں بھی تو اپنے پرانے کپڑے ہی پہن رہے ہیں نا” امی کی آواز گونجی

“تو بھائی کو ذرا کم مہنگی والی شیروانی سلوا دیتے نا، اپنی چادر دیکھ کے پاؤں پھیلانا چاہئے” علی کا احتجاج جاری رہا

“بیٹا بھائی کے سب دوست ایک جیسی شیروانی پہن رہے ہیں نا، پھر کتنا برا لگتا بھائی اگر۔۔۔”

“مگر یہ ضروری تو نہیں ہے نا، بھائی کا بھرم رکھنا اتنا ہی ضروری تھا کہ اصراف کیا جائے، اپنی حیثیت سے بڑھ کر پہناوا خریدا جائے، قرض لیا جائے۔۔۔” علی نے بات کاٹتے ہوئے کہا

فہیم کمرے میں اپنی شیروانی کو دیکھ کر اونچی آواز میں بولا: ” علی، ہم مڈل کلاس لوگ ہیں، مڈل کلاس والوں کے پاس نہ تو عیاشی کے لئے دولت وآسائشیں فراہم ہوتی ہیں اور نہ ماتم کرنے کو غربت۔ مڈل کلاس والوں کے پاس سفید پوشی ہوتی ہے، قائم رکھنے کو بھرم ہوتا ہے، اور یہی بھرم قائم رکھنا اسکی زندکی کا اولین مقصد، گول اور اچیومنٹ ہوتا ہے”

علی ، فہیم کے جواب پر تلملا کے رہ گیا، ابا اخبار پڑھتے ہوئے اک لمحے کو مسکرائے اور پھر اخبار بینی میں مشغول ہوگئے۔

غزل | ہم اہلِ خرد کی یوں بھی جنوں سے نسبت نہیں ملتی


ہم اہلِ خرد کی یوں بھی جنوں سے نسبت نہیں ملتی
کبھی ستارے نہیں ملتے ،  کبھی  قسمت  نہیں ملتی
تمنا   روز  کرتے  ہیں  تم  سے  مل ہی جا نے کی 
کبھی   رستہ  نہیں   ملتا  ،  کبھی اجازت نہیں ملتی
زیرِ غور  ابھی  تک  ہے ، معاملہ ترکِ مراسم  کا
کیا   کریں ، تیری  یاد  ہی  سے فرصت نہیں ملتی
اچھا  ہے  فیصلہ عداوت سے بدلنے کا ،  یوں بھی
محبت   کے   بدلے جہاں میں ،  محبت   نہیں  ملتی
اُسکے کمال  ہونے  میں  شک ہی   کیسا    دوستو
اُسکی  مجھ   سے   کوئی  بھی  عادت   نہیں  ملتی
سخن  وری  کمالِ  فن سہی،  لیکن ہنر نہیں قریشی
شاعری  سے  داد  تو ملتی  ہے  ، دولت  نہیں ملتی
ابرار قریشی

Thank you Raina’s Nephew


Hey Raina, this post is exclusively to thank you or your nephew, whoever it was, for all the awesomeness and bliss you brought to Pakistani cricket lovers, even after we lost the Semifinal.

Be sure, am not going to bash you or start a lecture about manners or down side of unlimited intake of booze. For, we Pakistani’s have much more sportsmanship unlike many others. See my last post, just before the Pakistan, India match.

Anyway, true, we supported South Africa in that last super-eight game. But that’s what Indians did by supporting Australia against Pakistan earlier that day. Having said that, to be realistic, our support outside the field technically didn’t hurt or influence the game by any means. So it was the Indian team that played bad and lost, not because of Pakistan’s support to South Africa.

Raina's Shit
Suresh Raina’s Tweet that he deleted later on.

Secondly my dear, we made it to Semifinals and you didn’t. Accept that fact and live with it for the rest of your life. You are a very good player but only in IPL on home grounds. Needless to say how heart-broken we were after losing semifinal. Shattered and started bashing our own heroes. We individually analyzed every player, called them names and what not. But that’s our way of loving/owning them.

But you my dear were a great help to provide us the opportunity to be united again and start bashing something collectively. You or your nephew, whoever, provided us utter bliss and enjoyment (go through these hashtags #RainaNephew, #TweetLikeRaina, #ReplaceMovieTitleWithNephew).  So thank you very much for that tweet you probably composed while you were extremely high of something, watching your IPL performances.

Raina Apology
Raina’s tweet apologizing about earlier tweet and putting the blame on his Nephew

If you go through social media (FB/Twitter) of both countries, before and after these matches, you’d find a great difference in attitudes of both countries; needless to say which one’s better, all hail Aman ki Asha. Now, that you’ve lost and have some time left for the IPL, take some-time out and learn how to play well on ground with bat rather playing with words on twitter later on, for which you have to apologize as well. And secondly, learn how to control emotions first, if not, at least accept your fault like a man. Although we forget our defeat because of your action, and apology later one, but dear a neighbor’s brotherly advice, your excuse is nothing but crap seriously, grow up.

Good luck for IPL, where you perform the best =D

Regards,

Me not my Nephew