بیگانی شادی میں عبداللہ دیوانہ


Originally published on Dunya News Blog

گزرے رمانوں کی بات ہے، ایک گاؤں تھا۔ جس میں لوگ رہا کرتے تھے۔ ہر کلاسیکل کہانی کی طرح اس گاؤں میں بھی ایک چوہدری صاحب کی حویلی تھی، جو فی سبیل الله تمام اہلِ علاقہ سے بھتہ وصول کرتے، اپنی من مانی کرتے۔ جس سے دل کرتا الجھتے، جس پہ چاہتے الزام دھرتے۔ تھانہ کچہری بھی اپنی اور پنجائیت بھی اپنی۔ غرضیکہ ایک مکمل ولن صفت چوہدری صاحب تھے۔ اسی گاؤں میں کچھ گھر غریبوں مسکنیوں کے بھی تھے۔ غریبوں نے کبوتر پال رکھے تھے۔ بڑے چوہدری صاحب کا محبوب تین مشغلہ انکے کبوتروں کا شکار ہوتا۔ لاکھ پیچ و تاب کھانے اور تلملانے کے باوجود کوئی چوہدری صاحب کے سامنے جا کر احتجاج کی ہمت نہ کرتا، انکے مرتبے، رعب اور دبدبے سے ڈرتا اور اسی وجہ سے چوہدری صاحب سے اچھے تعلقات کے خواہاں رہتے، انکی ہاں میں ہاں ملاتے، مگر کوئی فائدہ نہ ہوتا۔ خدا کی کرنی ایسی ہوئی کہ چند سال بعد بڑے چوہدری صاحب چل بسے، مسکینوں نے اپنے گھر میں انکو خوب گالیاں نکالیں اور اپنے تئیں بہت ہمت والے بن گئے۔ چوہدری صاحب کے جس جانشین نے مسندِ اقتدار سنبھالا وہ بڑے صاحب سے بھی دو ہاتھ آگے نکلا، وہ کبوتروں کے انڈوں سے نکلنے کا انتظار ہی نہ کرتا اور مسکینوں کے گھروں میں جا جا کر گھونسلوں سے انڈے ہی گرا گرا کر توڑ دیتا، اور الٹا مسکینوں کو سخت ڈانٹ بھی پلاتا۔ خیر، وقت کا پہیہ چلتا رہا، حتیٰ کہ اس چوہدری صاحب کا وقت بھی ختم ہوا۔ مسکین جو بہت اکتائے بیٹھے تھے، ایک بار پھر اکٹھے ہوئے، جوش ولولے کیساتھ پرانے عہد دہرائے گئے، انکے سیانوں نے پیشین گوئیاں کرنی شروع کردیں کہ فلانا بیٹا اگر سردار بنا تو ہمارا ہمدرد ہوگا اور کچھ نے کہا نہیں وہ نہیں دوسرا ہمارا والی وارث ہوگا، اسی اثناء میں ایک بزرگ کا وہاں سے گزر ہوا تو انہوں نے کہا، اوئے عقل کے اندھو، تمھیں اتنی نسلوں سے آج تک یہ اندازہ نہیں ہوا کہ انکے گھر کا جو بھی سردار ہوگا، تھمارا رکھوالا اور والی کبھی بھی نہ ہوگا، بلکہ پچھلے سے بڑھ کر ہی ہوگا ظلم و استبداد میں، خیر سیانے تو سیانے ہیں، انہوں نے بزرگ کی ایک نہ مانی اور لگے رہے سیان-پتی جھاڑنے۔

Obama Vs Romney
پنڈ کا نیا چوہدری کون؟

اب ذرا اسی قصے کو امریکی صدارتی الیکشن کے حوالے سے دیکھیں اور اندازہ کریں کہ کلنٹن، بش اور پھر اوبامہ ہمارے کتنے خیر خواہ رہے ہیں۔ اور رومنی یا اوبامہ میں سے کوئی بھی امریکی صدر بنے ہمارے لئے وہ اس گاؤں کا ظالم چوہدری ہی ہوگا، جسکی پنجائیت اپنی، تھانہ کچہری اپنا، اور شکار کا شوق، شکار بھی ہم مسکینوں کا! تو اب میں اپنے معزز میڈیا سے، اور اپنے انتہائی قابل تجزیہ نگاروں اور ان محبِ وطن پاکستانیوں سے جو صرف اس آس پر دعائیں کررہےہیں کہ اگر رومنی یا اوبامہ آئے گا تو ویزہ پالیسی نرم ہوگی یا پاکستان کے لیئے بہتری ہوگی اور انکو امیگریشن کا چانس مل سکے گا، پوچھنا یہ چاہتا ہوں کہ بھایئو، انکلو دوستو، کیا معنی آپکے تجزیے اور دعائیں؟ لوگ ایک دوسرے سے ایسے پوچھ رہے ہیں کہ آپ کس کو فالو کررہے ہو جیسے اوبامہ اور رومنی حلقہ این-اے 56، روالپنڈی سے الیکشن لڑرہے ہوں، اور ابھی وائیٹ ہاؤس سے “جیئے بھٹو” کے فلک شگاف نعرے بلند ہونگے۔ یا جیتنے والا امیدوار حلف اٹھاتے ہی خود کو مسلم امہ کا رکھوالا کہہ کر اپنے نام سے قبل “امیر المومنین” کا لقب لگائے گا۔
میرے پیارو، پہلی بات تو یہ ہے کہ ‘پاویں سارا پنڈ وی مر جاوے، کمہار دے منڈے نوں کدے چوہدراہٹ نئیں لبنی’ اور جو چوہدری سردار بنے گا، وہ چوہدریوں کے حقوق کا ضامن اور محافظ ہوگا، ہمارا نہیں۔ تو آپ خوامخواہ بیگانی شادی میں دیوانے مت بنیں، وقت بچائیں اپنے لئے قوم کیلئے۔ اور روسی ادیب سلوگب کا وہ افسانہ یاد کریں جس میں چھوٹی مچھلی بڑی مچھلی کو تڑی لگاتی ہے کہ ہمارے حقوق یکساں سے، تم مجھے نہیں کھا سکتی، تو بڑی مچھلی میں جواب دیا، اچھا، اگر تم مجھے کھا سکتی ہو تو تم کھا لو، اور اخیر میں چھوٹی مچھلی نے خود عرض کی بڑی مچھلی سے کہ بہن مجھے کھالے۔ ہم بجائے بڑی مچھلی سے پنگا کرنے کہ، اس سے دور ہی بھلے، اسکی نہ دوستی اچھی نہ دشمنی۔ اللٰؑہ آپ پر، مجھ پر، اور ہم سب پر اپنی رحمت فرمائے۔ آمین

Karachi Factory Fire Incident


While media is busy in covering our political guru’s and Quaid’s visits to fire burnt factories and meetings with their families in Karachi, this 6 year old kid asked me a very simple question, why all these big-guns visit these places only after an incident? why don’t they visit such places proactively to prevent losses. After every incident, they assure investigations will be taken place, justice will be done, yet another incident happens. Are they making us fools?

He’s a small kid, his mind keeps on wondering and he can come up with these silly questions. For, he doesn’t know anything about democracy and how it works. A minister or a political leader is a busy person, our legislators and office bearers have a busy schedule and have lots of important matters to take care of so they cannot waste their precious time in visiting these small factories or meet these small people when they are alive. See how many efforts our leaders, office bearers and legislators are putting in after recent floods, terrorism and other claimities. Then there’s a priority list. Anyone could easily tell whats more important in responding to american call or saving life of a person being burnt alive. Obviously it’s the call, for the reason, governments are being fed by Americans and these poor people merely are voters and nothing else. Everyday sets a new record for incompetence, corruption and misery for Pakistanis.
We’ve been hearing this since 4 years now that ‘steps being taken to stabilize and strengthen democracy’, and while doing so, they neglect everything and everyone else. Regardless of everything, all they focus is to generate leads that benefit them, their family and friends, all in all the elite class. All we hear is ‘appropriate action will be taken’ or ‘we’ll make sure nothing will happen again’ yet no improvement witnessed. All crocodiles busy in collecting their share of the profit and crafting policies and laws that eventually protects them or their interests in government, nothing for a common man! Hardly any of the office bearers know a little about the portfolio he/she is looking after. They don’t understand the business and its requirements, so they don’t bother bringing in any innovation, advancement and thus all our industries and ministries are stuck in past, working on procedures defined in 1950’s that unable to cope with challenges of the day.
Basic thing is how we take-up an issue and go about it, and we lack that. Whatever the issue maybe, media creates such a hype that officials instead of paying attention to the matter, put more focus on media and interviews etc. As soon as the news came out of factory fire, there came statement that this is an act of extortionists and how they have been pressurizing for protection money etc and reportedly the owner flew of the country while everyone else was busy in building their stories. New factory will be built, material loss will be compensated but those who lost their lives will never come back, hundreds of families are finished, and have no reason to live anymore. Although it seems normal to have that many deaths in a country where half the men are born just to be the victims of such incidents.
Either we don’t have laws that protect all the stake holders for common good, or there’s no implementation, check and balance. If there’s any check, it is bypassed either by corruption or influences in government. So, issues like this arise. Pity that we don’t have backup plans or systems to support/manage/resolve such issues. Had there been a proactive approach and a proper check & balance, there would have been much less losses. We have hundreds and thousands of such factories in Pakistan that are a continuous threat to many human lives. Apart from factory issue, same goes with PIA. Our aviation industry has been on verge of collapsing with 2-3 private planes crashed and every 2nd week a PIA flight emergency landing or anything of the sort, all due to negligence, incompetence and corruption.
This negligence, incompetence and corruption have claimed more lives than that of terrorism. Our biggest problem is this, if we don’t act proactively, that day isn’t very far when these so-called leaders and Quaids fall victim to it. I don’t know any of the victims personally or remotely, but they touched my heart. It seems as if I was among them, I can feel their pain, it wasn’t the factory that burnt, it was my heart. And I fear if I don’t do anything about it now, I would become the next victim.